خداوند کا شکُر ہے کہ نیدرلینڈز میں پاکستانی مسیحی مہاجرین کے لیے شروع کی جانے والی تحریک پھل دار ثابت ہو رہی ہے، اور اس کی بازگشت نہ صرف ڈچ پارلیمنٹ میں بلکہ مقامی ڈچ کمیونیٹی اور چرچز میں بھی سُنی جا رہی ہے۔ اس کے لیے میں پوری پاکستانی ڈچ کریسچن کمیونیٹی کو مُبارکباد پیش کرتا ہوں۔ اور ہر اُس کمیونیٹی ممبرز کو سلوٹ کرتا ہوں جہ کسی نہ کسی طرح سے اس تحریک سے جُڑے رہے۔ میں اُن ممبرز کا بھی احترام کرتا ہوں جو خود پناہ گزین ہونے کہ باوجود بغیر کسی خوف کے حق کی اس جنگ میں اگلے مورچوں پر لڑتے رہے۔ ڈچ پارلیمٹیرین جناب جویئل فوردوینڈ کا کردار اس تحریک میں مرکزی رہا، وہ پاکستان پہنچے، پاکستانی مسیحیوں کے مخدوش حالات کا قریب سے مشاہدہ کیا اور پھر ہماری کمیونیٹی کے ایک وفد سے ملاقات کی، ہماری پٹیشن کو اپنی رپورٹ کا حصہ بنا کر پارلیمنٹ میں پیش کیا ۔ ہمیں اس تحریک کے مثبت نتائج حاصل ہو رہے ہیں۔
تحریک میں جاوید روبن گل، ساجد بھٹی، جانسن ویئلم، عابد شکیل، پاسٹر ایرک سرور، مورس عنایت، شہزاد بھٹی، انجم اقبال، کلیم سلیم، کیون ایرک، تنویر قُربان ،منگت مسیح ، انیل، سُنیل عمانیئل اور واٹسن گل تھے۔ اس کے علاوہ اپنی دعاؤں سے ، قیمتی مشوروں سے اور حوصلہ افزائ سے سپورٹ کرنے پر ہم ایگبرٹ الایئس، پرویز اقبال ، ندیم اسلم اور بہت سے بہن بھایوں کے شکر گزار ہیں۔

http://www.refdag.nl/nieuws/binnenland/actie_tegen_terugsturen_christenasielzoekers_naar_pakistan_1_713090
ڈچ زبان سے ناواقف دوست گوگل ٹرانسلیشن کا استمال کر سکتے ہیں۔

Advertisements