واٹسن گل
نیدرلینڈز:20 June 2013

صوبہ پنجاب، میں مسیحیوں کے ساتھ ہونے والے مظالم میں کمی کے بجائے تیزی دیکھنے میں آرہی ہے۔ چھوٹی سی غلطی کی اتنی بڑی سزا کے ایک غریب مسیحی کی تین بیٹیوں کو سرعام برہنہ کر کے مارا گیا اور اسی طرح بے لباس سڑکوں پر گھومنے پر مجبور کر دیا گیا۔ ہوا کی ان بیٹیوں کا قصور کیا تھا۔ مسیحی ہونا؟۔ یا ان کی بےزبان بکریاں غلطی سے ایک اثر رسوخ والے چوہدری کے کھیتوں میں چلی گئ۔ یہ واقعہ پنجاب کے گاؤں سرسیر چک نمبر 21 پیش آیا۔ پاکستان میں خصوصی طور پر پنجاب میں اور پھر نواز حکومت میں اس طرح کے واقعات میں اضافہ تشویشناک ہے۔ حکومت پاکستان کومسیحی کمیونیٹی کے تحفظ کویقینی بنانے کے لیے عملی اقدامات کی ضرورت ہے۔ ہم حکومت پاکستان سے پُرزور مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اس واقعہ میں ملوث افراد کو عبرت کا نشان بناییں۔

Advertisements