واٹسن گل
نیدرلینڈز؛20 June 2013

پاکستانی ڈچ کریسچن کمیونیٹی سمیت تمام مسیحی اندرون ملک اور بیرون ملک پاکستان نہایت بھرپوُر طور پر پاکستان تحریک انصاف کے مُمتاز قادری کی رہائ کے متعلق بیان کی شدید مُزمت کرتے ہیں۔

آج بروز جمعرات مورخہ 20 جون قومی اسمبلی کے بجٹ سیشن میں تقریر کرتے ہوئے تحریک انصاف کے رکن اسمبلی مجاہد خان نے کہاکہ وہ ممتازقادری کی فوری رہائی کا مطالبہ کرتے ہیں۔ یاد رہے کہ گورنر پنجاب سلمان تاثیر کی سکیورٹی پر تعینات پنجاب پولیس کی ایلیٹ فورس کے سپاہی ممتاز قادری نے چار جنوری 2011ء کو اسلام آباد کے علاقے ایف سکس میں سلمان تاثیر کو سرکاری اسلحہ سے فائرنگ کر کے اس وقت ہلاک کر دیا تھا، جب وہ ایک ریستوران سے باہر آ رہے تھے۔ گورنر پنجاب سلمان تاثیر کا قصور صرف یہ تھا کہ اس نے ایک غریب مسیحی خاتون کے لیے آواز بلُند کی۔ اور بدنام زمانہ قانون میں ترمیم کی بات کی جس سے مسیحی قوم برئراست متاثر ہو رہی تھی۔ گورنر پنجاب سلمان تاثیر کو قتل کر دیا گیا اور اس کے خاندان کو نشان عبرت بنا دیا گیا۔ ان کے صاحبزادے شہباز تاثیر کو اغواہ کر لیا گیا۔ اور جیسے کہ میں پہلے بھی لکھ چکا ہوں کو شہباز سلمان تاثیر کو ممتاز قادری کے بدلے چھوڑا جایے گا اور ان کو دیت لینے کے لیے مجبور کیا جائے گا۔

پاکستان تحریک انصاف کے اس انوکھے مطالبے سے سیاسی طور پر ان کو شدید نقصان پہنچے گا۔

Advertisements