واٹسن گل
نیدرلینڈز

آج انسانی حقوق کی آزادی کا بین لاقوامی دن تمام دُنیا میں منایا جارہا ہے۔ 10 December 1948 کو اقوام متحدہ نے یہ فیصلہ کیا کہ دس دسمبر کو تمام دنیا میں یہ دن منایا جایے گا۔ اور یہ عزم کیا جایے گا کہ تمام دنیا کہ شہری کو بغیر رنگ، نسل، مزہب اور زات کے برابر کے حقوق حاصل ہونگے۔ ہر شخص آزاد ہوگا کہ اگر اس کو اپنے ملک میں مزہبی، نسلی یا کسی قسم کا بھی امتیاز کا سامنا ہوگا تو وہ کسی بھی ایسے ملک میں ہجرت کر سکتا ہے جہاں وہ اپنی زات اور عقیدے کو محفوظ سمجھتا ہو۔ آج اس عظیم فیصلے کو پینسٹھ سال گزر گیے مگر آج بھی کروڑو لوگ ان حقوق سے محروم ہیں۔ دنیا جہان میں ہزاروں کی تعداد میں انسانی حقوق کی تنظیمیں کام کر رہی ہیں۔ اور انسانی حقوق کی خلاف ورزی کی روک تھام پر بین الاقوامی قوانین موجود ہیں مگر عملی طور پر ان اطلاق نظر نہی آتا۔
377429_2304450259984_94147006_n
سویڈن سے یوروپئن پارلیمنٹ کی ممبر سیسیلیا وایکسٹوم اور جانسن ویلئم کے ساتھ،
with Taslima Nasreen
تسلیمہ نسرین معروف بنگلہ دیشی ناول نگار
foto
مجھے دو سال قبل یوروپیئن پارلیمنٹ میں اسی دن کے حوالے سے منعقد کی جانے والی ایک عظیم الشان تقریب میں مدعو کیا گیا ۔اس تقریب کی میزبانی گلوبل ہیومین رائٹس آرگنازیشن اور سویڈن سے یوروپئن پارلیمنٹ کی ممبر سیسیلیا وایکسٹوم (سویڈش لیبلرل پارٹی کی رکن اور یوروپئن یونین میں مندوب برائے انسانی حقوق) کر رہے تھے۔ اس کے علاوہ معروف نام بھی موجود تھیں۔ انورادھا کوئرالہ اس خاتون نے نیپال میں عورتوں اور جوان بچیوں کو اُس خطرناک مافیا سے نجات دلوائ جو ان کو اغواہ کر کے زبردستی جسم فروشی پر مجبور کرتا تھا۔ ان کو 2010 میں سی این این نے ہیرو اٌف دی ایئر کے ایوارڈ سے نوازا۔ تسلیمہ نسرین معروف بنگلہ دیشی ناول نگار بھی اس کانفرنس کا حصہ تھی۔ یہ وہی تسلیمہ نسرین ہیں جن کے ایک ناول کی وجہ سے ان کے سر کی قیمت نہ صرف بنگلہ دیش بلکہ پاکستان ،افغانستان اور انڈیا میں بھی مقرر کی گئ تھی۔
384172_2284449559979_892703458_n….foto.JPG pp
اس کانفرنس میں ہمارے وفد میں جناب روبن جاوید اور جناب جانسن ویلئم بھی تھے۔ اور برطانیہ سے تعلق رکھنے والے پاکستانی مسیحی جو کہ برٹش پاکستانی کرسچن اسوسییشن کے چیرمین ولسن چوہدری بھی ہیں ، وہ بھی مدعو کیے گیے تھے۔ ہم نے مل کر پاکستانی مسیحوں کی حالت زار پر یوروپئن یونین کے اس عظیم پلیٹفارم پر سوال بھی اٹھایے۔ مگر آج حالات میں کوئ تبدیلی نہی۔ اس کا یہ ہر گز مطلب نہی کہ ہم مایوس ہیں۔ افسوس صرف یہ ہے کہ ہم متحد نہی ہیں۔ مگر ہم آگے بھی اپنی زمہداریوں کو نہایت ایمانداری سے پورا کریں گے۔ اور اپنے پاکستانی مسیحوں کے ساتھ ہونے والے مظالم کے خلاف ہر فارم پر آواز اٹھایں گے۔
384645_2320234694585_225441045_n…. 383266_2320237454654_654274152_n

Advertisements