(رپورٹ ایمسٹرڈیم)

لندن میں میٹروپولیٹن پولیس نے الطاف حسین کو گرفتار کر لیا جس کے بعد کراچی میں خوف و ہراس کا سا سما ہے۔ کراچی مارکیٹ تقریبا سات سو پوئنٹ نیچے گر گئ۔ اور کراچیمیںموجود برٹش کونسل کو وقتی طور پر بند کر دیا گیا۔

ah180312

اس واقعے کو خاص طورحکومت کی جانب سے پر بڑی بردباری سے سنمبھالنا ہو گا۔ کیونکہ بہت سے حالات اس واقعہ کو پُرسرار بنا رہے ہیں۔ کیا وجہ ہے کہ پاکستا نی سیاسدان جو کہ برطانیہ میں کروڑوں کی جائداد کے مالک ہیں ،وہاں صرف ایک ڈیڑھ لاکھ پونڈ پر مہاجروں کے لیڈر کو منی لانڈرینگ کے کیس میں الجھا دینا۔ کیا ہم سرے محل بھول جایں۔ کیا رحمان ملک اور دیگر سیاسی لیڈرز بشمول بلوچ لیڈرز کی بڑی بڑی جائدادیں برطانیہ اور یورپ میں موجود ہیں۔ نواز شریف خاندان کا بزنس کس قانون کے تحت پاکستان سے بیرون ملک منتقل ہوا۔ کسی بھی عام پاکستانی کو ملک سے باہر جانے کے لئے صرف ایک ہزار ڈالر سے زیادہ کی اجازت نہی۔ مگر یہ لیڈرز کیسے کروڑوں باہر لے جاتے ہیں۔ ظاہر ہے قانونی طریقے سے تو نہی۔

الطاف حسین کو ایم کیو ایم سے الگ کرنے کی سازش ملک کے لئے خطرناک ہو گی۔ پہلے الطاف حسین کے شناختی کارڈ کے لئے حاصل کئے جانے والے کاغزات گم کرنے کا بہانہ پھر اس میں لگا تار تاخیر۔ یہ سب سوالات ہیں جن کے جوابات حکومت کو دینے ہونگے ورنہ نواز حکومت اس کی زمیدار ہو گی۔

کراچی میں بھی کوئ بڑا واقعہ رونما ہو سکتا ہے۔ کسی برطانوی ادارے پر حملہ، یا پھر کوئ دہشتگردی جس کا الزام الطاف حسین پر ڈالا جا سکتا ہے۔ نواز حکومت کی جانب سے الطاف حسین کو ولن بنا کر پیش کیا جاسکتا ہے اور کراچی کے ووٹ بینک پر قبضے کی کوشش کی جاسکتی ہے ، جیسے کے پیپلزپارٹی کرتی رہی ہے۔

Advertisements