واٹسن سلیم گل،

نیدرلینڈز: 20 جون 2014

پاکستانی مسیحی جو کہ تھائ لینڈ اور سری لنکا میں  اسایئلم میں ہیں، نہایت مخدوش اور برے حالات سے دوچار ہیں۔ ہمیں مختلف زرایع سے معلومات مل رہی ہیں کہ خاص طور پر تھائ لینڈ میں پاکستانی مسیحوں کو وہاں کے لوکل مافیا اور کرپٹ پولیس سے بہت زیادہ شکایات ہیں۔ گزشتہ روز مختلف دوستوں نے اس حوالے سے شکایات ہم تک پہنچائں ،جن میں بنکاک سے کرسٹی خورشید جو کہ اس تحریک میں ہمارے ٹیم کے ممبر بھی ہیں، جناب یونس گل اور پھر ایک خاندان جن کے چند ممبرز کو تو ہالینڈ پہنچا دیا گیا ہے مگر باقی اب بھی انہی حالات سے دوچار ہیں۔ ان سب کو شکایات ہیں کہ خصوصی طور پر بنکاک کی پولیس انہیں گرفتار کرتی ہے، رشوت لیتی ہے اور چھوڑ دیتی ہے، اگر کچھ بچ جاتا ہے تو اسٹریٹ مافیا چھین لیتے ہیں۔ اسی سلسلے کی کچھ معلومات لندن سے معروف ٹی وی اینکر تسکین خان نے بھی فیس بُک پر شیئر کی تھی۔

میری اس سلسلے میں بیلجئم سے معروف سیاسی، سماجی شخصیت جناب لطیف بھٹی صاحب اور چند اور دوستوں سے بات ہوئ ہیے۔ اس سلسلے میں ہم خاموش نہی بیٹھیں گے۔ ہم اپنی ٹیم کے ممبرز سے مشورہ کر کے اس پر حکمت عملی بناییں گے۔

میں پہلے بھی کہتا رہا ہوں اب بھی کہتا ہوں اور کہتا رہونگا کہ بغیر متحد ہوئے ہم اپنی کمیونٹی کے لئے کپچھ نہی کر سکتے۔ 27 جون کے مظاہرے کے حوالے سے آپ کو بتا دینا اپنا فرض سمجھتا ہوں کہ اس مظاہرے کے خلاف بھی سازشی عناصر مصروف عمل ہیں۔ میں تمام حالات کو ریکارڈ کر رہا ہوں اور مظاہرے کہ بعد آپکے کے سامنے ایک تفصیلی رپورٹ پیش کرونگا۔ میں صرف اپنی کمیونٹی اور ٹیم ممبرز سے کہنا چاہتا ہوں ایسے عناصر سے چوکنا رہیں۔ یہ خود کچھ نہی کرتے مگر دوسروں پر انگلیاں اٹھانے کے لئے تیار رہتے ہیں۔

ہمارا اس مظاہرے کے حوالے سے محض اتنا سا دعواہ ہے کہ ہم بیرون پاکستان کمیونٹی کو اکھٹا کرنے کی کوشش کر رہیں ہیں، ہمارا قطی طور پر یہ دعوای نہی ہے کہ ہمارے مظاہرے کے دوسرے دن گُستاخء رسول کے قوانین تبدیل ہو جاینگے۔ یا تھائ لینڈ، سری لنکا، ملیشیا اور دیگر ممالک میں پاکستانی مسیحوں کے لئے جنت کے دروازے کھلُ جاینگے۔ ہمارا یہ بھی دعواہ نہی کہ 27 جون کو برسلز میں یورپ اور برطانیہ کے پاکستانی مسیحوں کا ٹھاٹھے مارتا ہوا سمندر موجود ہو گا۔ مگر قوم کی غیرت رکھنے والے اور اپنے پڑوسی کی مدد کی مسیحی تعلیم پر عمل کرنے والے وہاں شانہ ب شانہ موجود ہونگے۔

ہاں ہمارا یہ دعواہ ہوگا کہ ہم اُن منافق سیاسی، سماجی، مزہبی تنظیموں اور اداروں کی مانند منافقت کی لسٹ میں شامل نہی ہونگے ،جو کمیونٹی کو متحد کرنے کے راگ الاپتے ہیں۔ مگر عملی طور پر ان کے مقاصد کُچھ اور ہیں۔ ہاں ہم ان سیاسی، سماجی، مزہبی تنظیموں اور چرچز کو خراجءتحسین پیش کرتے ہیں جو اتحاد اور یگانگت کے لئے اپنی انفرادی پہچان کو پس پُشت ڈال کر میدان میں اتر آئے ہیں،

ہم آپ سے درخواست کر سکتے ہیں کہ آپ اس مظاہرے میں اپنا کردار ادا کریں، اگر زاتی مجبوری سے شرکت نہی بھی کر سکتے تو دوسروں کو ضرور ترغیب دیں۔ خداوند ہم سب کو عقل، اور فہم عطا کرے اور اپنے پڑوسی کے دُکھ کو دور کرنے کی کوشش کرنے کی قوت دے۔ آمین۔   

Advertisements