ہرمجدّون

’’ عراق اور شام کے حالات دیکھ کر یقین ہوگیا ہے تیسری عالمی جنگ ہم مسلمانوں کی آپس میں ھوگی اور دنیا خاموشی سے ہمارا تماشا دیکھے گی ـ ‘‘  یہ ایک بہت عزیز دوست کی پوسٹ ہے جو پِچھلے دِنوں نظر سے گُزری ـ ڈاکٹر شاہد مسُعود کے ایک پروگرام میں بھی بڑی تفصیِل سے دُنیائے اسلام کے ممالک کے نقشوں میں اکھاڑ پچھاڑ اور تبدیلیوں کا ذِکر کیا گیا ـ آئی ایس آئی ایس کی بڑھتی ہُوئی سرگرمیوں اور طاقت کے زور پر عراق اور شام میں نئی صُورتِ حال ـ  ایران میں اِس کی وجہ سے پریشانی کی کیفیت ـ لیبیا کو تین ممالک کی شکل منقسم دکھانا ـ سلطنتِ عثمانیہ کی طرز پر ایک بار پھر ایک وسیع سلطنت کی بُنیاد کی طرف بڑھنا جِس میں اِسرائیل کی خود مُختار اور آزاد ریاست کو شامل کرنے کی سوچ ظاہر کرنا ـ اِس سے معلُوم پڑتا ہے کہ حالات تیزی سے بدل رہے ہیں اور ’’ ہرمجدّون  ‘‘  کی طرف بڑھ رھے ہیں ـ عبرانی زُبان میں یہ نام  ’’  ہر مجدّو  ‘‘  ہے جِس کا مطلب ہے  ’’  مجدّو کا پہاڑ  ‘‘  جہاں زمانۂ قدیم میں کئی جنگیں لڑی گئیں ـ بائبل مُقدس کے مُطابق اب یہیں پر نیکی اور بدی  کی قوتوں میں آخری فیصلہ کُن جنگ ہوگی ـ تاریخِ اسرائیل میں کوہِ مجدّو کا دامن یزرعیلؔ کی وادی اور اسدرلوؔن کا میدان کئی فیصلہ کُن جنگوں کا میدان بنے رہے ہیں ـ


یہاں پر ہی دبورؔہ اور برقؔ نے فتح کا گیت گایا ـ جدعونؔ نے عمالیقیوں کو شکست دی ـ ساؤلؔ فلستیوں کے ہاتھوں مارا گیا ـ شاہِ مِصرؔ فرعون نِکوہ نے یوسیؔاہ بادشاہ کو جنگ میں قتل کیا اور  شاہِ یہوداہ اخزیاہ فرار ہوتے وقت اسی جگہ مارا گیا ـ ہرمجدّون کا شہر  شارونؔ کے میدان اور وادی یزرعؔیل کے درمیان سے گُزرنے والے کاروانوں کے راستے پر واقع درّے کی حفاظت کرتا  تھا ـ اِس کے اِردگِرد کی کم بلند پہاڑیاں اِن خُونی معرکوں کی خاموش گواہ تھیں جو یہاں وقوع میں آئے تھے ـ یہاں پر جو خُونریزی ہُوئی اُس کی مثال دُنیا میں اور کہیں نہیں مِلتی ـ لہٰذا جِس جنگِ عظیم کی منظرکشی کی گئی ہے اِس کے لئے یہی جگہ سب سے مناسب جگہ ہے ـ


اِس لئے یہ کہنا تو مناسب نہیں کہ یہ جنگ مسلمانوں کی آپس میں ھوگی بلکہ یہ جنگ جو کہ جنگِ عظیم ہوگی اِس میں جوجؔ اور ماجوخؔ کی قوتیں شامل ہونگی ـ جوجؔ اور ماجوخؔ سے علامتی طور پر دُنیا کی سب بے دین اور مُلحد قومیں مُراد ہیں جیسے کہ حزقی ایل نبی کی کتاب میں ہمارا جوؔج سے اور ماجؔوج کی سرزمین سے تعارف کروایا گیا ہے  ـ یہ روش اور میسک اور توبل ہیں اور اِن کے فرمانروا بھی ـ تل العمرنا کی تختیوں میں ججایا کا ذکر ہے جِس کا تعلق وحشی لوگوں کے ساتھ تھا ـ یہ قومیں غالباً ایشیائے کوچک کے مشرقی علاقہ میں بحیرۂ اسودؔ کے کنارے مقیم تھیں ـ بعض مفسر  روشؔ ، میسکؔ اور توبلؔ کو موجودہ روسؔ ، ماسکو  اور توبالسکؔ سمجھتے ہیں لیکن اِن سے مُراد دُنیا کی سب بے دین اور مُلحد قومیں ہیں ـ  یاجوج اور ماجوج کا ذکر قرآن شریف میں سورہ الکہف میں بھی ہے ـ


اِس وقت دو مسالک میں لڑی جانے والی لڑائی میں اگر کوئی سیزفائر کی صورتِ حال نہ بنی تو یہ بڑھتے بڑھتے دُنیا کے امن کو تہہ و بالا کر کے رکھ دےگی ـ فی الوقت اگر کوئی یہ سمجھے کہ یہ مِڈل ایسٹ کے ممالک میں ہے اور یہیں تک محدود رہے گی تو یہ کہنا شائد مشکل ہو کہ یہ آگے نہیں بڑھے گی اور باقی دُنیا تک اِس کے شعلوں کی تپش نہیں پہنچے گی ناممکن لگتاہے ـ یہ آگ خصوصاً مُسلم ممالک میں تیزی سے بڑھتی اور پھیلتی جا رہی ہے ـ فی الوقت تو کوئی لیڈر شِپ اس کو ایڈریس کرتی نظر نہیں آ رہی ـ مُسلم ممالک کے سربرہان کو جلدسے جلد سر جوڑ کر بیٹھنے کی ضرورت ہے ـ
ہرمجدّون اِسی عراقی سرزمین پر واقعہ ہے ـ کیا یہ انڈ ٹائم ہونے جا رہا جو کہ ہونا ہی ہونا یا اِس انڈ ٹائم کو فی الوقت مواخر کیا جا سکتا ہے ـ کیا کوئی اِسلامی مُلک خصوصاً سعودی عرب کوئی کردار ادا کرسکتا ہے یا مغربی ممالک میں سے کوئی یا امریکہ  ـ وقت بڑی تیزی سے گزرتا جا رہا ہے اور ہرمجدّون جی ہاں ’’ ہرمجدّون  ‘‘ بڑی تیزی سے سامنے آتا جا رہا ہے  ـ اَے کاش ، اَے کاش کوئی روک لے ـ
سیمسن طارق
موڈیسٹو کیلیفورنیا

Advertisements