صوبہ پنجاب کے شہر گوجرانوالا میں ایک مشتعل ہجوم نے فیس بک پر مبینہ طور پر ’توہین آمیز مواد کی اشاعت‘ کے بعد احمدیوں کے 5 گھر نذرِ آتش کر دیے جس کے نتیجے میں 3 احمدی ہلاک جبکہ 4 شدید زخمی ہیں۔

ہلاک ہونے والوں میں ایک 55 سال سے زیادہ عمر کی خاتون بشیراں، ایک کم سن بچی کائنات اور ایک 7 سالہ بچی حرا شامل ہے جن کی ہلاکت دم گھٹنے کی وجہ سے ہوئی ہے۔

زخمیوں کو ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ہسپتال میں داخل کیا گیا ہے جہاں اُن کی حالت تشویشناک بتائی جاتی ہے۔

وفاقی وزیرِ تجارت خرم دستگیر خان نے اب سے 26 منٹ قبل اپنی ٹویٹ میں لکھا کہ ’پولیس کی بھاری نفری کا اثر پڑا ہے اور آگ بجھانے کے لیے مزید جگہ مل رہی ہے۔‘

اس سے قبل پولیس کے مطابق جب مبینہ توہین آمیز تصویر لگی تو اہلِ محلہ احمدیوں کے گھر گئے مگر پولیس کے مطابق اس دوران صورتحال سلجھنے کی بجائے مذید خراب ہو گئی جس دوران پولیس کے موقف ہے کہ فائرنگ ہوئی جس سے ہجوم میں شامل ایک بچہ زخمی ہو گی

گوجرانوالا میں پیپلز کالونی سرکل کے ڈی ایس پی کے مطابق ایک احمدی نوجوان کی جانب سے فیس بک پر مبینہ توہین آمیز مواد کی اشاعت کے بعد ایک ہجوم نے احتجاج کرنا شروع کیا جو بعد میں مشتعل ہو گیا اور اس نے احمدیوں کے گھروں کو آگ لگانا شروع کر دی۔

موقع پر موجود عینی شاہدین نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ اب تک مشتعل ہجوم چار گھروں کو نذرِ آتش کر چکا ہے جبکہ لوٹ مار کا سلسلہ جاری ہے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ ’ہجوم پولیس کے کنٹرول میں نہیں آ رہا ہے اور پولیس معاملے کی حساسیت کی وجہ سے اس طرح ردِ عمل نہیں دکھا رہی ہے جس طرح اسے دکھانا چاہیے۔‘

علاقے کے مقامی ایم پی اے عمران خالد بٹ اور سی پی او وقاص ندیم موقع پر موجود ہیں اور مقامی مذہبی رہنماؤں کی مدد سے مذاکرات کے ذریعے ہجوم کو منتشر کرنے کی کوششیں کر رہے ہیں مگر ابھی تک ان میں کسی قسم کی کامیابی نہیں ہوئی ہے۔

پولیس اور عینی شاہدین کے مطابق اس علاقے میں احمدیوں کے سات، آٹھ گھر ہیں اور واقعے کے بعد یہ سب خاندان روپوش ہو گئے ہیں۔

وفاقی وزیرِ تجارت خرم دستگیر خان نے ٹوئٹر پر لکھا ہے کہ ’پولیس حکام کو عرفات کالونی میں اقلیتی گھروں پر حملے سے نمٹنے کے لیے روانہ کیا ہے جو کہ میرے حلقے کے بالکل باہر ہے صورتحال قابو میں لائی جا رہی ہے۔‘

اس کے بعد ایک اور ٹویٹ میں انہوں نے لکھا کہ ’ضلعی اور پولیس انتظامیہ کے ساتھ کے ساتھ مسلسل رابطے میں ہوں جو حملہ کرنے والے ہجوم کو کنٹرول کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ پولیس کی اضافی نفری روانہ کی گئی ہے۔‘

اس کے کچھ دیر بعد انہوں نے ایک اور ٹویٹ میں لکھا کہ ’پولیس کی بھاری نفری موجود ہے اور لوٹ مار پر قابو پا لیا گیا ہے آگ بجھانے کا عمل جاری ہے۔‘

Advertisements