سری لنکا جانے والے دو مسیحیوں کو ایف آئ ای کی جانب سے ائرپورٹ سے واپس کرنے پر لاہور ہائ کورٹ نے نوٹس لے لیا۔

Royalty-free 3d law clipart graphic picture of brass scales of justice off balance, symbolizing injustice, over white.
Royalty-free 3d law clipart graphic picture of brass scales of justice off balance, symbolizing injustice, over white.

یاد رہے کہ عرفان مسیح اور ان کی ہمشیرہ ماریہ بتول اپنے عزیزوں سے ملنے سری لنکا جا رہے تھے۔ مگر دو بار ان کو فیڈرل انویسٹیگیشن ایجنسی نے جہاز پر سوار ہونے سے روک دیا۔ اور اس کی کوئ اخلاقی یا قانونی وجہ بتانے کی بھی ضرورت محسوس نہی کی۔ یہ دونوں مسیحی بہن بھائ قصور کے رہنے والے ہیں اور سری لنکا میں اپنے عزیزوں سے ملنے جا رہے تھے۔ ان کا کہنا ہے کہ ان کے پاس قانونی جواز موجود ہے کہ وہ بھی پاکستان کے آزاد شہری ہیں اور کہیں بھی آ جا سکتے ہیں ۔

سری لنکا جانے کے لئے ان کے پاس اسپا نسر لیٹر، ویزہ، سری لنکا کی آنے اور جانے کی ٹکٹ موجود ہے۔ پھر ایف آئ ای کے روکنے کیا جواز ہے۔ اس ظلم کے بعد انہوں نے پاکستان کے معروف مسیحی وکیل ، سماجی اور سیاسی شخصیت جناب مشتاق گل سے رابتہ کیا اور پھر ایڈوکیٹ سردار مشتاق گل نے ہائ کورٹ میں رٹ کر دی اور اعلی عدالت سے درخواست کی عدالت اس بات کا نوٹس لے کہ کیوں ان دو مسیحیوں کو علامہ اقبال انٹرنیشنل ائرپورٹ سے دو بار آف لوڈ کیا گیا۔ جب کہ دونوں کے پاس تمام سفری دستاویز موجود ہیں۔ جس پر عدالت نے ایف آئ اے کی کلاس لے لی اور کہا کہ وہ اپنے دائرہ کار میں رہ کر کام کرے اور مسیحیوں کو ہراساں کرنا بند کرے۔

Advertisements