پاکستان کے صوبہ پنجاب کے وسطی شہر گجرات میں مسیحیوں کے خلاف غم و غصہ ابھی بھی موجود ہے اور کل کا دن نہایت اہم ہے۔ واٹسن سلیم گل،

ہمارے زرایع بتا رہے ہیں کہ علاقے میں مقامی مسلمان اور مزہبی لیڈرز تین مسیحیوں کی گرفتارئیوں کے باوجود بھی مشتعل ہیں اور کل بروز جمعہ کو نماز کے بعد حالات خراب ہو سکتے ہیں۔ پولیس کی بھاری نفری علاقے میں موجود ہے۔ مگر یاد رہے کہ سانحہ گوجرہ، جوزف کالونی اور شانتی نگر جیسے واقعات میں بھی پولیس کی بھاری نفری کی موجودگی میں مسیحیوں کو جو جانی اور مالی نقصان اٹھانا پڑا اس کی بھرپائ آج بھی نہی ہو سکی۔ تمام مسیحیوں سے گزارش ہے کہ اپنی دعاؤں میں اپنے مسیحی بہن بھائیوں کو یاد رکھیں۔ اور مسلمان بہن بھائیوں سے درخواست ہے کہ اس طرح کے واقعات کی حوصلہ شکنی کے لئے اپنی آواز بلند کریں۔

Advertisements