حکومت پنجاب منڈی بہاالدین کے مسیحوں کی جان ؤ مال کے تحفظ کو یقینی بنائے۔ حالات خراب ہوئے تو زمہ دار شہباز شریف ہونگے۔ واٹسن سلیم گل۔
20-cases-registered-under-blasphemy
تحصیل پھالیہ بوسال کے چک 44 میں چند دنوں سے مسیحیوں خوف اور دہشت کے سایے میں زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔ چند دن قبل عمران مسیح پر مبینہ طور پر توہین رسالت کا الزام لگا جس پر علاقے کے مقامی مسلمان مشتعل ہو گئے۔ اور اس ہجوم نے مسیحیوں پر حملہ کرنے کی تیاری کر دی مگر پولیس نے وقت پر پہنچ کر معاملے کو رفع دفع کر دیا۔ پولیس کے جانے کہ بعد بھی مسلمانوں کا غصہ عروج پر ہے۔ ان کا مطالبہ ہے کہ یا تو وہ عمران مسیح ولد شریف مسیح کو بھرے چوک میں زندہ جلاہیں گے یا پھر چک 44 کے تمام مسیحی اسلام قبول کریں۔ دوسری صورت میں اس گاؤں کو چھوڑ دہیں ۔ مقامی مسلمانوں نے مسیحیوں کا حقہ پانی بند کر دیا ہے اور مسلمان دکانداروں نے کھانے پینے کی اشیاء بھی بیچنا بند کر دی ہیں ۔ یہ ظلم کی انتہا ہے۔
صوبائ حکومت اور وفاقی حکومت کو جلد سے جلد اس مسلئے پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ ورنہ چک 44 بھی کہیں گوجرہ نہ بن جاائے۔