سروسز ہسپتال لاہورکے سیکورٹی گارڈز اور ڈاکٹروں کے تشدد سے مسیح نوجوان ہلاک۔

29597395_1682121641875749_3775222715587408679_n

تفصیلات کے مطابق یہ واقعہ گزشتہ شب تقریبا دس سے گیارہ بجےکے درمیان اس وقت ہوا جب مسیحی خاتون کرن سلیم چیک اپ کے لئے گائنی ڈیپارٹمنٹ میں گئیں۔ڈیوٹی پر موجود لیڈی ڈاکٹر نے ایک نرس کو کرن کو دیکھنے کےلئے کہا لیکن کرن نے اصرار کیا کہ ڈاکٹر انہیں خود دیکھیں جس پر دونوں خواتین میں تلخ کلامی ہوی لیکن بعدازاں میڈیکل سپریٹینڈینٹ اور پولیس نے صلح کروا دی۔ کچھ دیر کے بعد جب کرن کے بھای سنیل سلیم انیل سلیم اور کرن کے شوہر کاشف شفیق کرن کو کھانہ دینے گئے تو گارڈز نے شٹر بند کر دیا اور سنیل انیل اور کاشف کو للکارا کہ اب دیکھتےہیں کہ تم یہاں سےکیسے نکلتے ہو۔ کرن کے بھائ جانسن سلیم نے بتایا کہ تین ڈاکٹرز گاینی وارڈ کے عملے اور سیکورٹی گارڈز نے تقریبا آدھے گھنٹے تک اس کے بھای سنیل سلیم پر تشدد کیا اور سنیل زخموں کی تاب نہ لاتےہوے ایسٹر سےچند روز قبل زندگی کی بازی ہار گیا

میں نے یہ خبر معروف وکیل اور سماجی شخصیت جناب ریاض انجم کے فیس بُک پیج سے اٹھائ ہے جو ہمیں باخبر رکھتے ہیں۔

Advertisements